15

پاک افغان سرحد پر بھاری لاگت سے بنے 2 جدید کراسنگ پوائنٹس کی تعمیر کو دھچکا

ایشین ڈیولپمنٹ بینک نے 168ملین ڈالر کا ابتدائی تخمینہ لگایا تھا، بینک نے منصوبے کیلیے 250ملین ڈالر قرضہ دیا ہے۔
اسلام آباد: پاکستان نے افغانستان کی سرحد پر بھاری لاگت سے بنے 2 جدید کراسنگ پوائنٹس کی تعمیر کو دھچکا لگ گیا۔
پاکستان نے افغانستان کی سرحد کے ساتھ2 جدید چیک پوسٹوں کے تعمیراتی کام کے دائرہ کار اور ڈیزائن کو محدود کرنے کا فیصلہ کر لیا۔ یہ فیصلہ منصوبے کے واحد بولی دہندہ ادارے این ایل سی کی طرف سے ابتدائی لاگت کے تخمینے سے185 گنا زیادہ بولی دینے کے نتیجے میں کیا گیا ہے۔ فوج کے تعمیراتی ادارے این ایل سی نے چمن اور طورخم کی سرحد پر ان چوکیوں کی تعمیر کے لیے 480ملین ڈالر کی بولی دی ہے۔
واضح رہے کہ ایشین ڈیولپمنٹ بینک جو اس منصوبے کے لیے 250ملین ڈالر کا قرضہ فراہم کر رہا ہے، نے 168ملین ڈالر کی رقم کا ابتدائی تخمینہ لگایا تھا۔ تخمینے سے زیادہ بولی ملنے پر سول اور فوجی قیادت نے چوکیوں کے ڈیزائن کو تبدیل کر کے صرف اہم ضرورتوں تک محدود کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ منصوبے کے دائرہ کار اور ڈیزائن میں تبدیلی کی وجہ سے اب اس کی تعمیر میں ایک سال کی تاخیر اور لاگت میں اضافے کا خدشہ ہے جبکہ پاکستان پہلے ہی اس منصوبے کے لیے حاصل کردہ قرضے کو بروقت ادا نہ کرنے کی وجہ سے 0.15 فی صد زر ضمانت ادا کر رہا ہے۔
یاد رہے کہ دسمبر 2015میں اے ڈی بی نے پاکستان کو3 کراسنگ پوائنٹس کی تعمیر کے لیے 250ملین ڈالر کی رقم بطور قرضہ دی تھی جن میں سے ایک چوکی بھارت سے متصل سرحد واہگہ پر جبکہ 2 چوکیاں افغانستان کی سرحد پر چمن اور طورخم کے مقام پر بننا تھیں۔ یہ قرضہ گزشتہ سال دسمبر میں قابل واپسی ہو گیا تھا اور پاکستان اس وقت سے زرضمانت ادا کر رہا ہے۔
منصوبے کی حساس نوعیت کے پیش نظر حکومت نے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی زیر قیادت خارجہ امور، دفاع، ریلوے، مواصلات اور تجارت کے وزرا پر مشتمل انٹیگریٹڈ ٹرانزٹ ٹریڈ منیجمنٹ سسٹم سٹیرنگ کمیٹی تشکیل دی تھی جو اس منصوبے کے حوالے سے فیصلہ سازی کرتی ہے۔ چوکیوں کا مقصہ سرحد کے آر پار لوگوں کی نقل و حرکت کو آسان بنانے کے ساتھ ساتھ درآمدات، برآمدات اور باہمی تجارت میں اضافہ کرنا ہے۔
این ایل سی نے ابتدائی طور پر تینوں چیک پوسٹوں کی تعمیر کا تخمینہ 251.2ملین ڈالر لگایا تھا لیکن اب اس نے افغان سرحد کی صرف 2 چوکیوں چمن اور طورخم کے لیے 480ملین ڈالر کا تخمینہ لگا دیا ہے۔ یہ دونوں چوکیاں افغان ٹرانزٹ ٹریڈ کے لیے بہت اہم ہیں کیونکہ افغانستان کے مال تجارت کی 80فی صد سے زیادہ نقل و حمل انھی2 چیک پوسٹوں کے ذریعے ہوتی ہے۔
ادھر اے ڈی بی نے اپنے قواعد میں نرمی کرتے ہوئے این ایل سی کے بولی دینے کی راہ ہموار کرنے کے لیے خصوصی رعایت دی تھی کیونکہ این ایل سی کے پاس سرحدی چوکیوں اور ڈرائی پورٹس کے انتظام کا تجربہ ہے اور چوکیوں کی حساس نوعیت کے باعث یہ فیصلہ کرنا پڑا۔
دوسری جانب پراجیکٹ ڈائریکٹر محمد زبیر نے ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا کہ این ایل سی اپنی بولی کم کر کے 340ملین ڈالر تک لے آیا ہے اور نئے ڈیزائن کا جائزہ لینے کے بعد بولی کو مزید بھی کم کر دے گا۔ انھوں نے امید ظاہر کی کہ بولی کی حتمی رقم منصوبے کی مناسبت سے کافی کم ہو جائے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ اصل تخمینہ تصوراتی ڈیزائن کی بنیاد پر لگایا گیا تھا اور وہ تین سال پرانی بات ہے۔
محمد زبیر کا کہنا تھا کہ چوکیوں کے دائرہ کار اور ڈیزائن میں تبدیلی کے باوجود یہ موجودہ دور کی تمام ضرورتیں پوری کریں گی۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ طورخم کا تعمیراتی ٹھیکا آئندہ سال فروری اور چمن کا مارچ تک جاری کر دیا جائے گاجبکہ واہگہ بارڈر کی چوکی پر کام کا ٹھیکا آئندہ سال جون تک دے دیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں