1

اقوام متحدہ کا اثرو رسوخ کم ہوتا جا رہا ہے ،سشما سوراج

نیویارک :بھارتی وزیرخارجہ سشما سورا نے اعتراف کیا ہے کہ دہشت گردی کا ناسور پوری دنیا میں پھیل چکا ہے، انہوں نے حسب روایت الزام تراشی کرتے ہوئے کہا کہ بھارت میں دہشت گردی پاکستان کی جانب سے آتی ہے،اقوام متحدہ کا اثرو رسوخ کم ہوتا جا رہا ہے، اس لیے اس میں تبدیلیاں کی جانی چاہئیں۔
انہوں نے اقوام متحدہ کی 73 ویں جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کا پاکستان میں پایا جانا کا واضح ثبوت ہے، ان کا کہنا تھا کہ ممبئی حملوں کا ماسٹر مائنڈ اب بھی آزاد ہے،پاک بھارت وزرائے خارجہ کی نیویارک میں ہونے والی ملاقات سے فرار کا الزام بھی پاکستان پر عائد کرتے ہوئے سشما سوراج نے حسب معمول ہرزہ سرائی کی اور مقف اپنایا کہ مذاکرات کا عمل پاکستان ہی کی وجہ سے ممکن نہ ہوا،انہوں نے کہا کہ ہم نے پاکستان میں نومنتخب حکومت کی مذاکرات کی دعوت قبول کی لیکن کشمیر کے حالات کے باعث مذاکرات ملتوی کیے،بھارتی وزیرخارجہ نے الزام تراشی کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے کہا کہ پاکستان سے مذاکرات کے لیے فرار کا الزام بھارت پر عائد کرنا درست نہیں ہے اور بھارت کے خلاف پروپیگنڈا کرنا پاکستان کی عادت ہے،سشما سوراج نے کہا کہ پاکستانی حکومت دہشت گردوں کی یاد میں ڈاک ٹکٹ جاری کرتی ہے،اقوام متحدہ کے متعلق ان کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کا اثرو رسوخ کم ہوتا جا رہا ہے اس لیے اس میں تبدیلیاں کی جانی چاہئیں۔
اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی اجلاس کے موقع پر سارک ممالک کے وزرائے خارجہ اجلاس ہوا تاہم بھارتی وزیرخارجہ سشما سوراج اپنا بیان دے کر اجلاس سے چلتی بنیں۔
پاکستان اور بھارت کے درمیان تلخیاں کم نہ ہوئیں اور بگڑے تعلقات سارک ممالک کے اجلاس پر بھی اثر اندا ہونے لگے۔ نیویارک میں سارک ممالک کے وزرا خارجہ کا سائیڈ لائن اجلاس ہوا۔ نیویارک میں سارک ممالک کے اجلاس میں پاک بھارت وزرائے خارجہ نے شرکت کی۔ تاہم بھارتی وزیرخارجہ نے حسب روایت نامناسب رویہ اپنائے رکھا۔ اور صرف آدھا گھنٹہ ظہرانے میں رہیں اور ظہرانہ ختم ہونے سے پہلے ہی روانہ ہوگئیں۔ اجلاس میں دونوں وزرا خارجہ میں رسمی جملوں کا تبادلہ بھی نہ ہوسکا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں